نمی دانم چہ منزل بود شب جائے کہ من بودم
بہر سو رقص بسمل بود شب جائے کہ من بودم
نہ میں جانو! تھی کیا منزل ، جہاں کل رات کو میں تھا
بہر سو رقص میں بسمل ، جہاں کل رات کو میں تھا

پر ی پیکر نگاری ، سرو قد ، لالہ رخساری
سراپا آفت دل بود شب جائے کہ من بودم
نگار اک سرو قد و لالہ رخسار و پری پیکر
کیے آفت برپا در دل ، جہاں کل رات کو میں تھا

رقیباں گوش بر آواز ، او در ناز،من ترساں
سخن گفتن، چہ مشکل بود شب جائے کہ من بودم
رقیباں گوش برآواز ، وہ در ناز، میں ترساں
تھی کرنی بات بھی مشکل، جہاں کل رات کو میں تھا

خدا خود میر مجلس بود اندر لامکاں خسرو
محمد ﷺ شمع محفل بود شب جائے کہ من بودم
خدا خود میر مجلس لامکاں اندر تھا خسرو ، اور
محمّد ﷺ شمع محفل، جہاں کل رات کو میں تھا

کلام: امیر خسروؔ
منظوم ترجمہ: طارق اکبر

Advertisements