سلطانِ کربلاؑ کو ہمارا سلام ہو
جانانِ مصطفیٰ ﷺ کو ہمارا سلام ہو

عبّاسِؑ نامدار  ہیں زخموں سے چُور چُور
اُس پیکرِ رضا کو ہمارا سلام ہو

اکبرؑ سے نوجوان بھی رَن میں ہوئے شہید
ہم شکلِ مصطفیٰ ﷺ کو ہمارا سلام ہو

اصغرؑ کی ننھی جان پہ لاکھوں درود ہوں
مظلوم و بے خطا کو ہمارا سلام ہو

بھائی، بھتیجے، بھانجے سب ہو گئے نثار
ہر لعلِ بے بہا کو ہمارا سلام ہو

ہو کر شہید قوم کی کشتی ترا گئے
امّت کے ناخداؑ کو ہمارا سلام ہو

ناصر ؔولائے شاہؑ میں کہتا ہے بار بار
مہمان کربلا کو ہمارا سلام ہو

Advertisements